عید قربان کی مناسبت سے

عید قربان کی مناسبت سے
عید قربان،وقوفِ عرفات کے بعد آتی ہے۔دنیاوی تعلقات سے رہائ کی عید ہے، ہر غیر خدا سے رہائ کی عید!۔ اس دن ہر حاجی اپنے اندر کے اسماعیل یعنی ہر اس چیز جس سے دنیاوی وابستگی ہو،قربان کردیتا ہے تاکہ اسکا وجود آزاد ہوجاۓ۔عید کی آمد آمد ہے۔عید قربان پاکیزہ ترین عید ہے۔بندگی اور سربسجود ہونے کی عید۔یہ دن دنیاوی آلائشوں سے رہائ اور نئ زندگی حاصل کرنے کا دن ہے۔عید قربان،قربت الہی حاصل کرنے والے دلوں کے نزدیک آنے کا دن ہے۔یہ دن ایک نئ زندگی اور ایک نئے انسان کے وجود میں آنے کے لمحات فراہم کرتا ہے۔۔۔۔۔۔ اس دن تمہاری مثال ابراہیم کی ہے جو اپنے اسماعیل کو قربان گاہ میں لایا ہے۔تمہارا اسماعیل کون ہے؟ کیا چیز ہے؟ تمہارا منصب؟ تمہاری عزت؟ تمہارا مقام؟روزگار؟پیسہ؟گھر؟مال واسباب؟۔۔۔۔۔۔؟ اسے تم خود بہتر جانتے ہو۔تم خود اسے انتخاب کرو،جو کچھ ہے اسے منیٰ میں لاؤ اور قربانی کیلئے منتخب کرو۔ میں صرف اسکی “نشانیوں ” کو تم پہ واضح کرسکتا ہوں۔
عید قربان کی شریعت میں اتنی تاکید کی گئ ہے کہ امیرالمؤمنین علی ع اس بارے میں ارشاد فرماتے ہیں کہ: “اگر لوگوں کو معلوم ہوتا کہ اس دن قربانی کا کیا اجر ہے تو قرض لے کر قربانی کرتے کیونکہ قربانی کے جانور کے خون کے پہلے قطرے کے زمین پہ گرنے کیساتھ ہی قربانی کرنے والے کو بخش دیا جاتا ہے۔”
حسین ع عالمی عشق کیمپین تمام مسلمانوں کو عید سعید قربان کی مبارکباد پیش کرتی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.