امام حسین ع دی انٹرنشنال کے چاہنے والو کی جانب سے عالم دین آیت اللہ نمر باقر نمر کو شہید کیے جانے کی شدید مذمت

سعودی عرب کے مشرقی علاقہ العوامیہ کے باشندہ شیخ باقر النمر جو کہ آل سعود میں اعتراضات کی جس کو دبانے کے لئے آل سعود نے طاقت کا شدید استعمال شروع کیا ؛ واضح رہے کہ سعودی عرب میں انتخابات، مختلف سیاسی جماعتوں اور آزادی صحافت جیسی جمہوریت کی کوئی بھی علامت نہیں پائی جاتی ہے۔ جس کی بنا پر سنہ دو ہزار گیارہ سے آل سعود کی حکومت کے خلاف عوامی احتجاج میں شدت پیدا ہوئی ہے۔
سعودی حکام نے عوامی حقوق کے لیے جاری تحریک کے قائد آیت اللہ نمر باقر نمر کو گرفتار کرکے موت کی سزا سنائی ہے۔
آیت اللہ نمر باقر نمر سعودی عرب کے سب سے اہم سیاسی قیدی تھے جنہیں سعودی کے شیعہ آبادی والے علاقوں میں سنہ دوہزار گیارہ سے بنیادی شہری اور جمہوری حقوق کی بحالی کے لیے عوامی تحریک جاری کی جو حکومت کے خلاف نکتہ چینی کے جرم میں سزائے موت دے کر شہید کر دیا گیا۔
سعودی عرب میں انسانی حقوق کی پامالی کے خلاف سامنے آنے والے رد عمل کا دائرہ پھیلتا جا رہا ہے اور آل سعود کی جانب سے سیاسی رہنماؤں اور انسانی حقوق کے کارکنوں کو طویل المدت قید اور موت کی سزا سنائے جانے کے بعد سعودی عرب کے عوام؛ امام حسین ع دی انٹرنشنال کے چاہنے والو اور عالمی حلقوں نے سعودی حکومت کے ان اقدامات کی مذمت کی ہے۔
آل سعود کی جانب سے مخالفین پر کئے جانے والے تشدد کے باوجود اس ملک میں عدل و انصاف کی برقراری کا مطالبہ زور پکڑتا جا رہا ہے۔ جس سے بیداری کی اس تحریک کی نشاندہی ہوتی ہے جس کا آغاز شیخ باقر النمر جیسی شخصیات کی کوششوں سے ہوا ہے۔ سعودی عرب کے حالات سے اس بات کی نشاندہی ہوتی ہے کہ آل سعود کی حکومت خوف و ہراس پھیلا کر بھی اس ملک کے عوام اور عوامی رہنماؤں کی آواز نہیں دبا سکی ہے۔ آل سعود کی جیلوں میں شیخ باقر نمر کی ثابت قدمی، اسلام کی حریت پسندانہ تعلیمات سے ان کے دستبردار نہ ہونے نیز سعودی عرب میں حکومت مخالف عوامی احتجاج کے جاری رہنے سے اس بات کی عکاسی ہوتی ہے کہ سعودی عرب کے عوام اپنے ملک پر مسلط آمرانہ نظام حکومت کا قلع قمع کرنے اور اپنے ملک میں عدل و انصاف قائم کرنے کے سلسلے میں پرعزم ہیں۔ ان حالات میں اگر آل سعود کی حکومت شیخ باقر النمر کی سزائے موت پر عملدرآمد کراتی ہے تو اس کا نتیجہ سعودی عرب میں عوامی انقلابی تحریک میں شدت پیدا ہونے اور آل سعود کی ظالمانہ حکومت کے متزلزل ہونے کے سوا کچھ اور برآمد نہیں ہوگا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.